حضرت مفتی اعظم پاکستان مفتی شفیع صاحب رحمہ اللہ کی شہرہ آفاق کتاب (اوزان شرعیہ ) پر مبنی ایک مفید ایپلی کیشن

اوزان شرعیہ کیلکولیٹر


جواب:
{{input}}{{unit(units.from_id).name}}={{result}}{{unit(units.to_id).name}}

اوزان شرعیہ ایپ

حضرت مفتی اعظم پاکستان مفتی شفیع صاحب رحمہ اللہ کی شہرہ آفاق کتاب (اوزان شرعیہ ) پر مبنی ایک مفید ایپلی کیشن


بحمد اللہ، اوزان شرعیہ ویب ایپ مفتیان کرام واہل علم حضرات کی خدمت میں پیش کرنے کی سعادت حاصل کی جارہی ہے۔۔
- اس ایپ کے ذریعہ بآسانی تمام شرعی اوزان کو اور تمام پرانے فقہی کتب کی اصطلاحات کو جدید رائج الوقت (لمبائی، ناپ، تول) پر کنورٹ کیا جاسکتا ہے۔۔
- نیز مختلف اہم مقادیر شرعیہ کے رائج الوقت پیمائشوں کو آسان انداز میں پیش کیا گیا ہے۔۔ مثلا مہر کی کم از کم مقدار، مہر فاطمی، سونے کا نصاب، چاندی کا نصاب۔ سونا چاندی کا موجودہ قیمت داخل کرنے پر ان تمام مقادیر کی بنیاد پر مطلوبہ قیمت نکالی جاسکتی ہے۔۔
- مزید یہ کہ معتمد دار الافتاؤں کی زیر نگرانی تیار کردہ زکوۃ فارم کی روشنی میں زکاۃ کیلکولیٹر کا بھی اضافہ کیا گیا ہے۔۔ جس کے ذریعہ اپنے مال کی زکوۃ کا حساب بآسانی نکالا جاسکتا ہے۔۔
اللہ پاک اس خدمت کو ھمارے لیے اور تمام ان احباب کے لئے ذریعہ نجات بنائے جنہوں نے دن رات ایک کر کے اس کام کے لیے انتھک محنت کی اور متعلقہ مواد کی تیاری و تالیف میں ہمہ تن مصروف رہے۔
آخر میں ہم اللہ رب العزت سے دعا گو ہیں کہ اس کام کو شرف قبولیت سے نوازے اور تمام مسلمانوں کے لئے نفع بخش بنائے. آمین
اصلاحات اور اضافات پر مستقل کام جاری ہے، مفید تجاویز کے لئے رابطہ کیجئے:

info@darulifta.info

چند اہم مقادیر شرعیہ

{{crncy}}
{{crncy}}
اوزان ومقادیر کو روپے کے حساب میں حاصل کرنے کے لئے سونا چاندی کی قیمت معلوم کرکے داخل کیجئے۔۔

ایک شرعی درہم:
{{conv_units(1,51,48)}}گرام چاندی
{{dirham_rate(1)}}{{crncy}}۔
ایک شرعی دینار/ مثقال:
{{conv_units(1,60,63)}}ماشہ سونا={{conv_units(1,60,48)}}گرام سونا
{{deenar_rate(1)}}{{crncy}}۔
مہر کی کم از کم مقدار: 10 درہم
{{conv_units(10,51,48)}}گرام چاندی={{conv_units(10,51,64)}}تولہ چاندی
{{dirham_rate(10)}}{{crncy}}۔
مہر فاطمی: 500 دراہم
{{conv_units(500,51,64)}}تولہ چاندی={{conv_units(500,51,68)}}کلو گرام چاندی
{{dirham_rate(500)}}{{crncy}}۔
چاندی سے نصابِ زکوة: 200 دراہم
{{conv_units(200,51,48)}}گرام چاندی={{conv_units(200,51,64)}}تولہ چاندی
{{dirham_rate(200)}}{{crncy}}۔
سونے سے نصابِ زکوة: 20 مثقال/ دینار
{{conv_units(20,60,48)}}گرام سونا={{conv_units(20,60,64)}}تولہ سونا
{{deenar_rate(20)}}{{crncy}}۔
صدقہ فطر کا نصاب: 200 دراہم
{{conv_units(200,51,48)}}گرام چاندی={{conv_units(200,51,64)}}تولہ چاندی
{{dirham_rate(200)}}{{crncy}}۔
صدقہ فطر کی مقدار، ایک نماز کا فدیہ نماز، ایک روزہ کا فدیہ
1 - نصف صاع (گندم)={{conv_units(0.5,67,68)}}کلو گرام
2 - ایک صاع (کھجور، جو، کشمش)={{conv_units(1,67,68)}}کلو گرام
قسم کا کفارہ (دس مساکین)
1 - نصف صاع (گندم) کے حساب سے={{conv_units(0.5,67,68)*10}}کلو گرام ...
...
2 - ایک صاع (کھجور، جو، کشمش) کے حساب سے={{conv_units(1,67,68)*10}}کلو گرام
نصاب وجوب قربانی: 200 دراہم
{{conv_units(200,51,48)}}گرام چاندی={{conv_units(200,51,64)}}تولہ چاندی
{{dirham_rate(200)}}{{crncy}}۔
دیت کی مقدار:
1 - بحسابِ درہم: 10000 دراہم={{conv_units(10000,51,68)}}کلو گرام چاندی={{conv_units(10000,51,64)}}تولہ چاندی
{{dirham_rate(10000)}}{{crncy}}
2 - بحسابِ دینار: 1000 دینار={{conv_units(1000,60,68)}}کلو گرام سونا={{conv_units(1000,60,64)}}تولہ سونا
{{deenar_rate(1000)}}{{crncy}}۔

زکوۃ کیلکولیٹر (زکوۃ کا حساب لگانے کا آسان فارم)

اہم ہدایات

1. اپنی تمام کیفیت کو مفتی صاحبان سے چیک کروالیں تاکہ زکوۃ میں کچھ کمی نہ رہ جائے۔
2. اس بات کا خصوصی خیال رہے کہ کسی چیز کا دہرا اندراج Double Entry نہ ہو، مثلا سونا، چاندی شروع میں لکھ چکے تو وہی سونا، چاندی دوبارہ مال تجارت والے حصہ میں نہ لکھا جائے، اسی طرح چیک، بانڈز وغیرہ کو نقد رقم میں شامل کرچکے ہیں تو قابل وصول حصہ میں اسے نہ لکھا جائے۔
3. یاد رہے کہ زکوۃ کا مصرف مسلمان، غیر سید مستحق زکوۃ ہیں، صحیح العقیدہ با اعتماد دینی ادارہ میں بھی جمع کروائی جاسکتی ہے۔ اور اپنے اصول وفروع (مثلا باپ دادا، نانا، نانی، بیٹا بیٹی پوتا پوتی نواسا نواسی وغیرہ) کو اور میاں بیوی ایک دوسے کو نہیں دے سکتے، اس کے علاوہ بہن بائی اور انکی اولاد کو (بشرطیکہ وہ مستحق زکوۃ ہوں) زکوۃ ادا ہوسکتی ہے۔ نیز عموما ہسپتال، رفاہی ادارے وغیرہ چونکہ ان اموال کو ان کے شرعی مصارف میں استعمال نہیں کرتے لہذا ان میں زکوۃ نہ دیا جائے۔ نیز انشورنس کی پالیسی اگر کسی نے غلطی سے لے لی ہو تو اصل ادا شدہ رقم پر زکوۃ ادا کرنی ہوگی، اور جو زائد رقم ہو اس کو بغیر ثواب کی نیت کے مستحق زکوۃ شخص کو دیدیں۔
(دار الافتاء جامعہ اشرفیہ لاہور، فتوی نمبر: 338/12، تاریخ اجراء: 1433/1/1ھ) فتوی پر جائیں

زکوۃ کے متعلق بعض کوتاہیاں

الحمد للہ، بہت سے مسلمان ایسے ہیں کہ جو زکوۃ ادا کرتے ہیں لیکن ان میں سے بہت سے لوگ طرح طرح کی کوتاہیوں میں مبتلا ہیں، مثلا:
1. بعض لوگ زکوۃ کا باقاعدہ حساب نہیں کرتے، جتنا جی میں آئے دیدیتے ہیں۔ اس بات کا اہتمام نہیں کرتے کہ جتنی زکوۃ ان پر واجب تھی، وہ سب ادا ہوگئی کہ نہیں۔ یہ طرز عمل درست نہیں۔ اگر اس طرح کرنے سے کچھ مال کی زکوۃ رہ گئی تو اتنے مال کی زکوۃ ادا نہ کرنے کا گناہ ہوگا۔
2. بعض لوگ حساب تو کرتے ہیں لیکن صحیح صحیح حساب نہیں کرتے بلکہ اندازہ سے حساب کرتے ہیں۔ اپنے اموال کا ایک عمومی اندازہ لگاتے ہیں اور اس کے حساب سے بننے والی زکوۃ ادا کرتے ہیں۔ ان میں سے بعض لوگ احتیاطا کچھ زیادہ زکوۃ ادا کردیتے ہیں۔ لیکن یہ طریقہ بھی درست نہیں اس لئے کہ اس سے پوری زکوۃ ادا ہونے کا یقین نہیں ہوتا۔ صحیح طریقہ یہ ہے کہ اموال کا پورا حساب کرکے زکوۃ ادا کی جائے۔ ہاں، ایسی صورت میں اگر کچھ زکوۃ مزید ادا کردی جائے تو یہ بہتر اور احتیاط کی بات ہے۔
3. بعض لوگ اموال زکوۃ کی وہ قیمت لگاتے ہیں جس پر انہوں نے مال خریدا یا جتنی رقم خرچ کرنے پر وہ مال تیار ہوا۔ یہ بھی درست نہیں۔ صحیح بات یہ ہے کہ زکوۃ کا حساب کرتے ہوئے ان اموال کی موجودہ بازاری قیمت لگانی چاہیے
4. بعض لوگ تمام اموال کی زکوۃ ادا نہیں کرتے، بلکہ بعض اموال کی زکوۃ ادا کردیتے ہیں اور بعض کی نہیں کرتے۔ اس کوتاہی کا بڑا سبب لاعلمی ہے۔ کہ ان کو یہ معلوم نہیں ہوتا کہ ان کے کون کون سے اموال پر زکوۃ ہے۔
(دار الافتاء جامعہ دار العلوم کراچی، فتوی نمبر: 61/1085، تاریخ اجراء: 1429/8/14 ھ) فتوی پر جائیں
{{bab.title}}:

{{index+1}}.{{fsl.title}}
({{i.des}})
{{crncy}}
یہ معلوم کرنے کے لئے کہ آپ کے اوپر زکوۃ فرض ہے یا نہیں ایک تولہ چاندی کی موجودہ قیمت فروخت سنار سے معلوم کرکے داخل کیجئے
{{crncy}}

جواب

زکوۃ کا نصاب{{conv_units(200,51,64)}}تولہ چاندی ہے، جس کی قیمت {{dirham_rate(200)}}{{crncy}} بنتی ہے۔
آپ کی وہ رقم جس پر زکوۃ واجب ہے اس سے کم ہے، لہذا آپ پر زکوۃ واجب نہیں۔
کل مال زکوۃ کی مالیت:{{zk_adds_total}}{{crncy}}
وہ رقم جو منہا کی جائے گی:{{zk_minss_total}}{{crncy}}
وہ رقم جس پر زکوۃ واجب ہے۔:{{zk_adds_total-zk_minss_total}}{{crncy}}(نصاب سے کم)
مقدار زکوۃ:{{zk_result}}{{crncy}}